Labels

بیانِ حال مفصّل نہیں ہوا اب تک

بیانِ    حال    مفصّل   نہیں   ہوا   اب   تک
جو  مسئلہ تھا وہی  حل نہیں  ہوا اب   تک

نہیں رہا کبھی میں تیری دسترس سے  دور
مِری  نظر سے  تُو اوجھل نہیں  ہوا اب  تک

بچھڑ کے تجھ سے یہ لگتا تھا ٹوٹ جاؤں گا
خدا  کا  شکر   ہے  پاگل   نہیں  ہوا  اب  تک

جلائے رکھا ہے میں نے  بھی  اک چراغِ امید
تمہارا   در  بھی  مقفّل  نہیں   ہوا   اب  تک

مجھے  تراش  رہا  ہے  یہ  کون  برسوں  سے
مِرا    وجود    مکمل    نہیں     ہوا  اب  تک

دراز    دستِ    تمنّا    نہیں    کیا   میں   نے
کرم    تمہارا    مسلسل  نہیں ہوا   اب   تک

No comments:

Post a Comment