Nahi Tha Apna Mizaaj Aisa

Nahi Tha Apna Mizaaj Aisa
معیار گرتا نہ دوستوں کا نہ ہم بھی دشمن کی ڈھال ہوتے
ضعیف دشمن پہ وار کرتے تو وقت کے ہم دجال ہوتے

نہیں تھا اپنا مزاج ایسا کہ ظرف کھو کر انا بچاتے
ورنہ ایسے جواب دیتے کہ پھر نہ پیدا سوال ہوتے

ہماری فطرت کو جانتا ہے تبھی تو دشمن یہ کہہ رہا ہے
ہے دشمنی میں بھی ظرف ایسا جو دوست ہوتے کمال ہوتے

جو آ کے تم حال پوچھ لیتے تو اتنی لمبی نہ عمر لگتی
کہ وصل کی اک گھڑی میں سارے گزر گۓ ماہ و سال ہوتے

اسے مبارک مقام اونچا صحیح حقیقت ہمیں پتا ہے
بناتے رشتوں کی ہم بھی سیڑھی تو آسماں کی مثال ہوتے

Nahi tha apna Mizaaj Aisa Ke Zarf kho kar Anaa Bachate 
Wagarna Aisay Jawab Dete k phir Na Paida Sawal Hote 

Humari Fitrat ko Janta hai Tabhi to Dushman ye keh raha hai 
Hai Dushmani Mein bhi zarf Aisa Jo Dost Hote Kamaal Hote 

Jo Aa k Tum Haal Poch Lete To Itni Lambi Na Umar Lagti 
Ke Wasl ki Ek Ghari Mein Sare Guzar gaye Maah o Saal Hote 

Usay Mubarik Maqaam Ouncha Sahi Haqeeqat Humein Pata hai 
Banate Rishton ki hum bhi Seerhi To Aasmaan ki Misaal hote

Comments