Kahan K Maktab-O-Mullah Kahan Ki Dars-O-Nisaab

Kahan K Maktab-O-Mullah Kahan Ki Dars-O-Nisaab
خبر تھی گھر سے وہ نکلا ہے مینہ برستے میں
تمام شہر لئے چھتریاں تھا رستے میں

بہار آئی تو اک شخص یاد آیا بہت
کہ جس کے ہونٹوں سے جھڑتے تھے پھول ہنستے میں

کہاں کے مکتب و مُلّا، کہا ں کے درس و نصاب
بس اک کتابِ محبت رہی ہے بستے میں

ملا تھا ایک ہی گاہک تو ہم بھی کیا کرتے
سو خود کو بیچ دیا بے حساب سستے میں

یہ عمر بھر کی مسافت ہے دل بڑا رکھنا
کہ لوگ ملتے بچھڑتے رہیں گے رستے میں

Khabar Thi Ghar Se Wo Nikla Hai Meenh Baraste Mein
Tamam Shehar Liye Chatriyan Tha Raste Mein

Bahaar Aayi To Ek Shakhs Yaad Aaya Bohat
Ke Jis K Honton Se Jharte The Phool Hanste Mein

Kahan K Maktab-O-Mullah Kahan Ki Dars-O-Nisaab
Bus Ek Kitaab-E-Muhabbat Reh Gai Hai Bastey Mein

Mila Tha Ek Hi Gahak To Hum ßhi Kya Karte
So Khud Ko Bech Diya Be-Hisab Saste Mein

Ye Umar Bhar Ki Musafat Ha Dil Bara Rakhna
K Log Milte Bicharte Rahen Ge Raste Mein

Comments