Labels

Badan ki Ramz samajh Roh ka ishara samajh

Badan ki Ramz samajh Roh ka ishara samajh
Mujhe samajh na samajh dukh mera khudara samajh

بدن کی رمز سمجھ ' رُوح کا اشارہ سمجھ
مجھے سمجھ ' نہ سمجھ ' دُکھ مِرا خدا را سمجھ

Tujhe hum aur kisi ka na hone den gay kabhi
Tu bha gaya hai hamain khud ko ab hamara samajh

تجھے ہم اور کسی کا نہ ہونے دیں گے کبھی
تُو بھا گیا ہے ہمیں ' خود کو اب ہمارا سمجھ

Jo tergi mein tujhe kuch dikhai deta nahi
Samajh mein aaye to is ko bhi eik ishara samajh

جو تِیرگی میں تجھے کچھ دِکھائی دیتا نہیں 
سمجھ میں آئے تو اِس کو بھی اک نظارہ سمجھ

Nahi to waqat hi samjhaye ga tujhe eik din
Main chahti hon meri baat ko dobara samajh

نہیں تو وقت ہی سمجھائے گا تجھے اک دن
مَیں چاہتی ہوں ' میری بات کو دُوبارہ سمجھ

k main to apne bhi kuch kaam aa nahi pai
Tujhe ye kisne kaha tha mujhe sahara samajh

کہ مَیں تو اپنے بھی کچھ کام آ نہیں پائی
تجھے یہ کس نے کہا تھا ' مجھے سہارا سمجھ

Ye dil se aankh tak aaya howa jo aansoo hai
Ye tergi mein chamak jaye to sitara samajh

یہ دل سے آنکھ تک آیا ہُوا جو آنسو ہے
یہ تیرگی میں چمک جائے تو ستارہ سمجھ

Ye kargha talasimat hai yahan Meher
Khasara nafa samajh nafe ko khasara samajh

یہ کار گاہِ طلِسمات ہے ' یہاں مہر
خسارہ نفع سمجھ ' نفع کو خسارہ سمجھ

No comments:

Post a Comment