khata par aur ki khud ko bhala barbad kia karna

khata par aur ki khud ko bhala barbad kia karna
jo tujh ko bhoal betha hai, usay phir yaad kia karna

bohat asan hai kehna magar karna bohat mushkil
k jin ki qaid mein hon khud, inhe azaad kia karna

na jane kia se kia hum ho gaye is dil k hathon ab
jahan humdard aesa ho wahan, jallad kia karna

chalo acha howa wo shaks hum sa ho nahi paya
yahan khud se hai bezari to, eik humzad kia karna

koi rishta bachana ho to humne hai yehi sikha
mohabbat jab na ho kafi to phir faryad kia karna

sabhi dilshad hain, magan hain apni duniya mein
inhe batla k apna haal phir nashad kia karna

kiya hai door nasay ko to chora hai zamane ko
nahi jab sikhna hai kuch, bhala ustad kia karna

mokalmal khud mein lagta hai hamaein veerana pan apna
k jab mitna hi chahat ho to phir boniyad kia rakhna

yehi bas soch k betha hon Abrak kat k duniyaa se
isi ka ghum bohat hai, ab naya ijaad kia karna

 خطا پر اور کی خود کو بھلا برباد کیا کرنا
جو تجھ کو بھول بیٹھا ہے, اُسے پھر یاد کیا کرنا

بہت آسان ہے کہنا مگر کرنا بہت مشکل
کہ جن کی قید میں خود ہوں, انہیں آزاد کیا کرنا

نجانے کیا سے کیا ہم ہو گئے اس دل کے ہاتھوں اب 
جہاں ہمدرد ایسا ہو, وہاں جلاد کیا کرنا

چلو اچھا ہوا وہ شخص ہم سا ہو نہیں پایا
یہاں خود سے ہے بے زاری تو اک ہمزاد کیا کرنا

کوئی رشتہ بچانا ہو تو ہم نے ہے یہی سیکھا
محبت جب نہ ہو کافی تو پھر فریاد کیا کرنا

سبھی دلشاد ہیں اپنے , مگن ہیں اپنی دنیا میں
انہیں بتلا کے اپنا حال, پھر ناشاد کیا کرنا

کِیا ہے دور ناصح کو تو چھوڑا ہے زمانہ یہ
نہیں جب سیکھنا ہے کچھ، بھلا استاد کیا کرنا

مکمل خود میں لگتا ہے ہمیں ویرانہ پن اپنا
کہ جب مٹنا ہی چاہت ہو تو پھر بنیاد کیا کرنا

یہی بس سوچ کے بیٹھا ہوں ابرک کٹ کے دنیا سے
اسی کا غم بہت ہے اب, نیا ایجاد کیا کرنا

Comments