jab ankh mein kuch khaak si urhti nazar aai

jab ankh mein kuch khaak si urhti nazar aai
samjhe sabhi khush fehm k hade safar aai

eik umar to jage the k chaat jaye andhera
pal bhar ko lagi ankh to milne sehar aai

main ne to warq par abhi lekne the bohat naam
dhondli si ye surat kahan se ubhar aai

shayad isay kehte hain tamanna ki talafi
bholi hoi eik yaad sar e shaam ghar aai

palkhon pe na ansoo na sitare na charagha
tu aaj shab e hijr meri jaan kidar aai

usne bhi kia raah badalne ka irada
sad sukar mohabbat bhi kisi mor par aai
-------------------------------------------------------
جب آنکھ میں کچھ خاک سی اُڑتی نظر آئی
سمجھے سبھی خوش فہم کہ حدِ سفر آئی

اِک عُمر تو جاگے تھے کہ چھٹ جائے اندھیرا
پَل بھر کو لگئ آنکھ تو ملنے سحر آئی !

میں نے تو ورق پر ابھی لکھنا تھے کئی نام
دُھندلی سی یہ تصویر کہاں سے اُبھر آئی؟

دل میں ہے عجب ساعتِ نو روز کا عالم
بُھولی ہوئی اِک یاد سرِ شام گھر آئی؟

شاید اِسے کہتے ہیں تمنا کی تلافی !
ہونٹوں پہ تبسم تھا کہ پھر آنکھ بھر آئی؟

پلکوں پہ نہ آنسو نہ ستارے نہ چراغاں
تو آج شبِ ہجر میری جاں کدھر آئی؟

اُس نے بھی کیا راہ بدلنے کا ارادہ !
صد شکر محبت بھی کسی موڑ پر آئی

اِک راحتِ اعزاز سجی تیری جَبیں پر
اِک تہمتِ پیہم تھی کہ محسنؔ کے سَر آئی

Comments