ghar se nikla tha k duniya ko badal dalon ga

ghar se nikla tha k duniya ko badal dalon ga
kia ghazab hai k main khud roz badal jata hon

sach ki rahon pe main chalta hon bari niyat se
jane phir kaise main raste hi badal jata hon

har ghari sath mere rehte hain ye kia. kyun. kab.
inse bachne ko irada hi badal jata hon

rooh chekay hai meri kaam to aa logo k
nafz arhta hai to ye soch badal jata hon

mere lafzon k hain mani sabhi methe methe
kia karon lehjhe se matlab hi badal jata hon

jab bhi khushbo se lagaya hai yahan jee main ne
phool chota hon to kanto mein badal jata hon

main na mano ga magar sach to nahi badle ga
log rehte hain wahin main hi badal jata hon
-----------------------------------------------------
گھر سے نکلا تھا کہ دنیا کو بدل ڈالوں گا
کیا غضب ہے کہ میں خود روز بدل جاتا ہوں

سچ کی راہوں پہ میں چلتا ہوں بڑی نیت سے 
جانے پھر کیسے میں رستے ہی بدل جاتا ہوں

ہر گھڑی ساتھ مرے رہتے ہیں یہ کیا ,کیوں, کب 
ان سے بچنے کو ارادے ہی بدل جاتا ہوں

روح چیخے ہے مری کام توں آ لوگوں کے 
نفس اڑتا ہے تو یہ سوچ بدل جاتا ہوں

مرے لفظوں کے ہیں معنی سبھی میٹھے میٹھے
کیا کروں لہجے سے مطلب ہی بدل جاتا ہوں

جب بھی خوشبو میں لگایا ہے یہاں جی میں نے 
پھول چھوتا ہوں تو کانٹوں میں بدل جاتا ہوں

میں نہ مانوں گا مگر سچ تو نہیں بدلے گا
لوگ رہتے ہیں وہی, میں ہی بدل جاتا ہوں 

Comments