chalo phir loat jayein hum

chalo phir loat jayein hum
jahan pe kuch nahi badla
na mah o saal badle hain
na maazi haal badle hain

wahan pe loat jayein hum
jahan maloom ho k bas
nahi kuch aur badla hai
faqat hum tum hi badle hain

wohi matti wohi khushbo
wohi sundhi fizaein hain
wohi gulzar manzar to
wohi manchai rahain hain

wohi bachpan wohi bohray
wohi sab hain jawan qisse
magar ab tum nahi ho wo
magar ab main nahi hon wo

wohi badal wohi barish
wohi kashti hai kagaz ki
wohi dhope wohi saye
wohi din raat man bhaye

wohi ronak wohi khushiyan
wohi jeene ki chahat hai
magar bekar hai sab kuch
agar hum. hum nahi hai wo

sabhi kuch phir khayalon mein
yahan kyun jee raha hon main
agar hai kuch naya to bas
nahi ho tum. nahi hain hum

gaya wo loat aaye phir
yahan aesa nahi hota
hai rasta eik tarfa ye
koi wapas nahi hota

magar kab koi hai samjha
magar kab koi hai mana
sabhi morr morr k hain takte
sabhi be aas hain marte

Chalo Phir Loat Jayein Hum
Jahan Pe Kuch Nahi Badla

 چلو پھر لوٹ جائیں ہم
جہاں پہ کچھ نہیں بدلا 
نہ ماہ و سال ہیں بدلے
نہ ماضی حال ہیں بدلے

وہاں پہ لوٹ جائیں ہم
جہاں معلوم ہو کے بس
نہیں کچھ اور ہے بدلا 
فقط ہم تم ہی بدلے ہیں

وہی مٹی وہی خوشبو
وہی سوندھی فضائیں ہیں 
وہی گلزار منظر تو
وہی من چاہی راہیں ہیں

وہی بچپن وہی بوڑھے 
وہی سب ہیں جواں قصّے 
مگر اب تم نہیں ہو وہ 
مگر اب میں نہیں ہوں وہ

وہی بادل وہی بارش 
وہی کشتی ہے کاغذ کی 
وہی دھوپیں وہی سائے
وہی دن رات من بھائے

وہی رونق وہی خوشیاں
وہی جینے کی چاہت ہے 
مگر بے کار ہے سب کچھ
اگر ہم، ہم نہیں ہیں وہ

سبھی کچھ پھر خیالوں میں
یہاں کیوں جی رہا ہوں میں 
جو گھاؤ بھر چکا کب کا
یونہی پھر سی رہا ہوں میں

سبھی کچھ وہ پرانا ہے 
سبھی کچھ پھر سہانا ہے
اگر ہے کچھ نیا تو بس
نہیں ہو تم , نہیں ہیں ہم

گیا وہ لوٹ آئے پھر
یہاں ایسا نہیں ہوتا 
ہے رستہ ایک طرفہ یہ
کوئی واپس نہیں ہوتا

مگر کب کوئی ہے سمجھا 
مگر کب کوئی ہے مانا 
سبھی مڑ مڑ کے ہیں تکتے
سبھی یہ آس ہیں مرتے

چلو پھر لوٹ جائیں ہم
جہاں پہ کچھ نہیں بدلا

(نظم)
فقط ہم تم ہی بدلے ہیں
اتباف ابرک 

Comments