Sunday, 20 November 2016

In k cheray ki baat ho jaye

ان کے چہرے کی بات ھو جائے
آج، ذکر گلاب رہنے دو

حشر اٹھا دیں گی تمہاری آنکھیں
آج، رخ پر نقاب رہنے دو

No comments:

Post a Comment